11/09/2011

دل کی بستی عجیب بستی ہے (اقبال)

دل کی بستی عجیب بستی ہے
لوٹنے والے کو ترستی ہے

ہو قناعت جو زندگی کا اصول
تنگ دستی، فراخ دستی ہے

جنس دل ہے جہاں میں کم یاب
پھر بھی یہ شے غضب کی سستی ہے

ہم فنا ہو کر بھی فنا نہ ہوئے
نیستی اس طرح کی ہستی ہے

آنکھ کو کیا نظر نہیں آتا
ابر کی طرح برستی ہے

شاعر: علامہ اقبال




2 تبصرے:

  1. کیا آپ کو یقین ہے کہ یہ "علامہ اقبال" کی نظم ہے- ہمارا خیال ہے کہ یہ علامہ اقبال کی نہیں ہے-

    ارسلان

    جواب دیںحذف کریں
  2. ارسلان یہ اقبال کا غیر شائع شدہ کلام ہے۔
    ہے علامہ اقبال کا ہے۔ یہ بات مستعند ہے۔

    جواب دیںحذف کریں

بد تہذیب تبصرے حذف کر دیئے جائیں گے

نیز اپنی شناخت چھپانے والے افراد کے تبصرے مٹا دیئے جائیں گے۔