11/27/2011

تم قومی غیرت کی بات کرتے ہو؟

مجھے نہیں معلوم لوگوں میں اتنا حوصلہ کیوں نہیں ہوتا کہ وہ مخاطب پر اپنی شناخت ظاہر کر سکیں؟ میں کل ایک بلاگ پوسٹ تحریر کی یار لوگ اُس پر تبصرہ کرنے کے بجائے میرے ای میل پر اپنا تبصرہ کر رہے ہیں وہ بھی اصلی نام سے نہیں ہے۔
دلچسپ بات یہ کہ ای میل کے تبادلے مین ایک اہم الزام ہم پر یہ لگا کہ ایک تو میں متعصب ہوں دوسرا تنگ نظر! ہم انکار نہیں کرتے ممکن ہیں دونوں باتیں درست ہوں کیونکہ بقول ہمارے بڑوں کے یہ دونوں بیماریاں جس میں ہوتی ہیں وہ خود میں اس کی تشخیص نہیں کر سکتا یوں ہم اس پر اپنی رائے نہیں دیتے اور چونکہ ہم “اُبھرتی آواز” کی شخصیت سے واقف نہیں تو اُس پر تبصرہ نہیں کرتے۔
ای میل تبادلے میں جو بات وجہ تنازعہ بنی وہ وہ ہی معاملہ ہے جو نیٹو و پاکستان کے درمیان وجہ تنازعہ ہے۔ یعنی پاکستانی سرحد پر نیٹو کا حملہ۔ ہمارا موقف یہ تھا کہ عوامی رد عمل کی غیر موجودگی میں فوج اس معاملے پر اپنی آواز بلند نہ کرتی! اور فوجی ردعمل بھی چند دن میں عامی جذبات کے ٹھنڈا ہونے پر اسکرین سے غائب ہو جائے گا۔ مگر “ابھرتی آواز” اس سے متعفق نہیں تھے۔
میرا کہنا یہ ہے کہ ہم گذشتہ 11 سال کی اس جنگ میں چالیس ہزار جانے گنوا چکے ہیں۔ جون 2004 سے اب تک 290 ڈراؤن حملوں میں قریب 2700 کے قریب جانوں کا نقصان اُٹھا چکے ہیں ان ڈھائی ہزار مرنے والوں میں سے آفیشلی 98 فیصد افراد کے متعلق سب کا اتفاق ہے (مارنے والوں کا بھی) کہ وہ بے گناہ تھے بقایا دو فیصد پر بھی شبہ ہے کہ ممکن ہے اُن کے اکثریت بھی مطلوبہ ٹارگٹ نہ ہوں بمشکل 70 سے 90 افراد کے درمیان پر قیاس ہے کے وہ اُن کے مطلوبہ “دہشت گرد” ہیں۔ اتنی بری تعداد میں بے گناہ پاکستانی شہریوں کی اموات پر کوئی ردعمل نہیں ہوا تو اب کیسے فوجی جرنیل کی غیرت جاگ سکتی ہے؟
اور قومی غیرت کا یہ حال ہے کہ ہم نے اُس چالیس ہزار شہیدوں کو یاد رکھنے کا کوئی ایک بہانہ بھی نہیں تراشہ یار کیا رکھیں گے؟ غیر ملکی فوج کے ہاتھوں ڈراؤن اٹیک میں مرنے والوں کا کبھی نہیں سوچا تو اب کے کیا کر لیں گے؟
اپنے فوجی کے مرنے پر ردعمل دیکھنا ہو تو دور کی کیا مثال دوں اپنے نام نہاد اتحادیوں کو ہی دیکھ لو۔ مئی 2007 میں ایک پاکستانی فوجی نے جذبات میں آ کر ایک امریکی فوحی میجر لیری کو مار (پوری دہشت گردی کی جنگ میں کسی پاکستانی فوجی کے ہاتھوں مارے جانے والا واحد اتحادی فوجی) گیا تو امریکی میڈیا ہے اُسے فیچر کیا۔ اُس وقت ہی نہیں بلکہ پر سال اُس کی برسی پراور اس کے علاوہ بھی بہانے بہانے سے لکھتے ہین اور ہر بار اسے ایک فوجی کا جذباتی انفرادی رد عمل نہیں بتاتے بلکہ پاکستانی فوج کی اندرونی سازش قراد دیتے ہیں ایسا آخری فیچر نیو یارک جیسے اخبار نے شائع کیا جبکہ پینٹاگون آفیشلی یہ کہہ چکا ہے کہ ہونے والی تفتیش میں یہ ثابت ہوا ہے کہ یہ ایک انفرادی عمل تھا۔ مزید یہ کہ انہوں نے اپنے مرنے والے فوجی کی یاد میں ایک میموریل فنڈ قائم کیا ہے جس کے تحت نہ صرف طالب علموں کو اسکالرشپ دی جاتی ہے بلکہ ہر سال بیس بال ٹورنامنٹ کا بھی انعقاد ہوتا ہے۔
اور دیکھ لیں “اُبھرتی آواز” ہم کہاں کھڑے ہیں؟ موجودہ ڈرامے بازی کو آپ رد عمل کہتے ہیں تو آپ کی مرضی۔
جب تک ہم اس “دہشت گردی” کی نام نہاد جنگ کا حصہ ہیں تب تک تبدیلی حاکم و جرنیل کت رویے میں مجحے نظر نہیں آتی۔
آپ اپنی شناخت تو بتانے کی ہمت نہیں رکھتے! قومی غیرت کہاں سے دیکھاؤ گے؟

4 تبصرے:

  1. اسطرح کے لوگ خود کو انقلابی کہتے ہیں یا خدائی فوجدار پر کبھی بستر سے بھی نہیں اٹھ پاتے بوقت ضرورت

    جواب دیںحذف کریں
  2. چند دنوں کی بات ہے۔
    ہماری بھی اور ساری عوام کی غیرت مہنگائی اور لوڈ شیڈنگ کی طرف منتقل ہو جائے گی۔
    چند بڑے بڑے شہروں میں گیس و بجلی لوڈ شیڈنگ کر دی جائے گی۔
    اینڈھن مہنگا کر دیا جائے گا۔
    آٹابھی مہنگا ہو گیا تو۔۔۔۔
    غیرت کی ساری ہوا خارج ہو جائے گی۔

    جواب دیںحذف کریں
  3. وکیل صاحب اتنا غصہ صحت کیلئے اچھا نہیں ہوتا۔
    اصل میں کبھی کبھی بندہ زیادہ کھا لیتا ہے تو گیس اوپر سر میں چڑھ جاتی ہے اور بندہ (ابھرتی آواز) بہکی بہکی باتیں کرنے لگتا ہے۔

    ابھرتی آواز کیلئے سپیشلی
    http://ummat.com.pk/2011/11/27/news.php?p=news-09.gif

    یہ آیئندہ جاریت تو ہر وقت ہوتی رہتی ہے۔

    جیسے بزدل مار کھانے کے بعد کہتا ہے کہ اب کے مار تو دیکھتا ہون اور ہر مکے کے ساتھ ہی یہی کہتا جاتا ہے اور مار کھاتا جاتا ہے۔

    جواب دیںحذف کریں
  4. درويش خراسانی صاحب نے مجھے سکول کے زمانے کا ايک واقعہ ياد کرا ديا ۔ يہ تو اُس زمانہ ميں عام کہا جاتا تھا "اب کے مار کے ديکھ" مگر ايک لڑکے نے مار کھانے کے بعد روتے ہوئے کہا "مجھے تو مارا ہے ميرے بڑے بھائی کو مار کے ديکھ"

    اپنی حکومت اور قوم کے حال پر ميں نے ايک بہت پرانا شعر 1994ء سے ميرے اس مطالعہ کے کمرے کی کتابوں والی ايک الماری کے شيشے پر لکھ کر لگايا ہوا ہے
    اے خدا جذبہءِ ايثار عطا کر ہم کو
    جو گفتار ہے وہ کردار عطا کر ہم کو

    جواب دیںحذف کریں

بد تہذیب تبصرے حذف کر دیئے جائیں گے

نیز اپنی شناخت چھپانے والے افراد کے تبصرے مٹا دیئے جائیں گے۔