ّ بے طقی باتیں بے طقے کام: October 2012