3/07/2010

چھترول

آج کل میڈیا میں چھترول کافی ان ہے اور ایک چھترول وہ ہے جو سرکاری پولیس عوام کی کرتی ہے دوسری وہ جو عالمی سطح پر ہم خود کروا رہے ہیں! اس پر ہی اشرف مخلص کی یہ نظم شیئر کر رہا ہوں۔


کیوں نہ ہووے انج چھترول
کریئے سبھناں نال دھرول

نفسا  نفسی  د ا  اوہ  عالم
ہر ایک بندہ رج  کے  ظالم
رہندی کسراں کوئی شے سالم
بے  مہار  غولاں  دے  غول

چمبڑی ساہنوں عجب بماری
پیسے دے اسیں رج پجاری
چوراں  ڈاکوواں  دے  حواری
ماڑا  تک  وکھایئے  ڈول

ملا ں  توں  منصفاں  تیک
پیسہ  ہر  بندے  دی  چیک
پیسے  جتھوں  آون  ٹھیک
اک  گنو  سو  مارو  پول

مولاپاک رکھے وچہ میچے
کریئے پٹھے کم اچییچے
بے غیرت ماں بھین تو ویچے
بوہجے  پ ا لئے   ر قم  اڈول

امریکہ  بم  ماری  جا و ے
رہبر  بس  پچکاری  جا و ے
خالی بتے  ساری  جا  و ے
جھوٹھ دے نرے وجاوے ڈھول

بھلے  رب  دے  سب  فرمان
دنیا  وچہ  نہ  عزت  آن
کھایئے جھوٹھے قسم قرآن
مکریئے کر کے ہر ایک قول

کیوں نہ ہووے انج چھترول
کریئے سبھناں نال دھرول