1/30/2010

جمہوریت کے ساتھ کیا ہوا؟

ہماری والدہ پیپلزپارٹی کی ہامی رہی ہیں نہ صرف یہ کہ ہامی رہی ہیں بلکہ محلہ کی سطح پر کافی ایکٹو کارکن بھی اُن کی ان سیاسی ہمدردیاں شادی کی بعد کراچی بلکہ سچ تو یہ ہے ماڈل کالونی آنے کے بعد کی ہیں دوسری جانب ہمارے والد مسلم لیگ کے حمایت کرتے تھے اور علاقے کی سطح پر مسلم لیگ کی کارنر میٹنگ میں شرکت کرتے تھے۔ وہ الگ بات ہے جب سے زرداری صاحب کے پاس پارٹی کی قیادت آئی ہے تب سے اب ہماری فیملی میں صرف ایک بڑے تایا ابوہی پیپلزپارٹی کا دفاع کرتے نظر آتے ہیں۔
ہمارے والد اکثر والدہ کی موجودگی میں اُنہیں چیڑانے کے لئے ممکن ہے ایک قصہ بھٹو کے حوالے سے سنایا کرتے تھے کہ جناب ایک مرتبہ بھٹو صاحب اسٹیج پر تشریف لائے اور انہوں نے تقریر شروع کی ”میری ماوں، بہنوں، بھائیوں اور بزرگو" ابھی تک اتنا ہی کہا تھا کہ ہاتھ مائیک سے ٹکرا گیا جو کہ شاٹ تھا لہذاکرنٹ لگا اور بھٹو صاحب کی زبان سے نکل گیا "تمہاری تو۔۔۔۔۔۔سنسر۔۔۔"
یہ ممکن ہے بلکہ ذیادہ امکان یہ ہے کہ گھڑا ہو لطیفہ ہو مگر ذیل میں ریکارڈ شدہ ہے۔







آخر یہ ہی ہونا تھا بھائی جمہوریت کے ساتھ

میڈیا، بلاگرز اور اردو

پاکستان میں خواہ پریس میڈیا ہو یا الیکٹرونک میڈیا اس پر اردو کی اجارہ داری ہے، ہاں یہ کہا جا سکتا ہے کہ اردو الیکٹرونک میڈیا پر انگریزی کے شوقین ایسے اینکر ضرور ہونگے جو ولایتی اردو اور دیسی انگریزی بولتے ہیں۔ حد تو یہ کہ جسے ہم نمبر ایک انگریزی چینل مانتے تھے معلوم ہوا ہے اب اُس پر بھی چھ گھنٹے اردو کی حکومت ہوگی، چینل کو بچانے کے لئے یہ اقدام اُٹھایا جا رہا ہے۔
ایک طرف یہ معاملہ دوسری طرف حیرت انگریز معاملہ یہ ہے کہ انٹرنیٹ پر نہ نہ کرتے بھی پاکستانی بلاگرز میں انگریزی بلاگرز کی تعداد اردو بلاگرز سے چار پانچ گنا یا شاید اس بھی ذیادہ ہے، وجہ کیا ہے؟
یوں تو عملی زندگی میں بھی یار لوگوں کی رائے میں انگریزی بولنا ایک اضافی خوبی کے بجائے قابلیت و ذہانت مانا جاتا ہے مگرافسوس جی افسوس جو دراصل حیرت کے بعد کی سطح ہے تب ذیادہ ہوتا ہے جب اردو بلاگرز میں سے کوئی یہ تاثردے کہ اردو زبان نہ صرف اظہار کےمعاملے میں انگریزی سے پیچھے ہے بلکہ اس زبان تک خود کو محدود رکھنے والے دراصل سوچ و میعار میں پست ہیں۔
پچھلی اردو بلاگرز ملاقات جس میں کُل گیارہ افراد نے شرکت کی جن میں ایک خاتون سمیت آٹھ اردو بلاگرز اور ایک ممکنہ اردو بلاگر جیسا کہ انہوں نے وعدہ کیا تھا بھی شامل تھے، اس اب تک کے سب سے بڑے اردو بلاگرز کے اجتماع میں بھی اردو بلاگرز و میڈیا کا انگریزی میڈیا و بلاگرز سے تقابلی جائزہ لینے کی کوشش کی گئی تھی اس کی تفصیل کی ذمہ داری میں اُن ہی احباب کے لئے رہنے دیتا ہوں جنہوں نے اردو بلاگرز ملاقات کی روداد لکھنے کی ذمہ داری لی تھی۔
میرا سوال وہ ہی ہے،جس کے جواب کا میں طالب ہوں گا،جو میں نے اُس ملاقات میں بھی رکھا تھا کہ کیا وجہ ہے اردو پرنٹ و الیکڑونک میڈیا اردو بلاگنگ کو اہمیت نہیں دیتا جبکہ اس کے مقابلہ میں دونوں پاکستانی انگریزی چینل سمیت نہ صرف لوکل انگریزی پرنٹ میڈیا بلکہ کئی صورتوں میں غیر ملکی نیٹ و الیکٹرونک میڈیا پاکستانی انگریزی بلاگرز کا حوالہ دیتا ہے؟
ڈوئم یہ کہ اردو عوام و الناس کی زبان ہے نیٹ پر یار لوگ رومن اردو میں بات چیت کرتے ہیں مگر پھر کیاوجہ ہے کہ اردو بلاگرز کی تعداد اتنی کم ہے؟
- - - - -
اردو بلاگرز کی ملاقات میں کچھ خاص موضوعات پر تحریروں کی وعدہ ہوئے تھے کون کون اللہ کا بندہ پورے کرے گا؟